21 ربيع الآخر 1438 | En | FrDeId | Ru
مفصل تلاش
عقائد خاندان اور معاشرہ مالی معاملات آداب و اخلاق جرائم اور فیصلے مسائل رسم و رواج نت نئے مسائل و احکام عبادات

قسط پر بیچنے اور نقدی بیچنے میں مباح منافعہ

فتوی نمبر ٢٩٥٧ بابت سال ٢٠٠٥ء مندرج استفتاء پر مطلع ہوئے جو حسب ذیل سوال پر مشتمل ہے:

قسطوں پر بیچنے میں اور نقدی بیچنے میں مباح منافعہ یا کمائی کی کیا مقدار ہے؟

جواب : عالی جناب ڈاکٹر علی جمعہ محمد حفظہ اللہ

اللہ تبارک و تعالی ارشاد فرماتا ہے:( وَأَحَلَّ اللّهُ الْبَيْعَ وَحَرَّمَ الرِّبَا) - اور اللہ نے تجارت کو حلال کیا اور سود حرام کیا - [سورہ بقرہ: ٢٧٥] ، اور شریعت نے منافعہ کی کم از کم کی یا زیادہ سے زیادہ کی کوئی حد مقرر نہیں کی ہے. اس بنا پر نقدی بیچنے اور قسطوں پر بیچنے میں منافعہ کی کوئی متعین مقدار نہیں ہے ، لیکن ہم سوال کرنے والے کو یہ نصیحت کرتے ہیں کہ وہ اپنے ساتھ خرید و فروخت کرنے والوں کے ساتھ مہربانی برتے ، اور حد سے زیادہ منافعہ نہ بڑھائے کیونکہ حضرت رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم سے روایت کی گئی ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: ''اللہ تعالی اس نرم خو شخص پر رحم فرمائے جو بیچنے، خریدنے اور قرضہ واپس لینے میں نرمی کا برتاؤ کرے''. اس حدیث کی امام بخاری نے روایت کی ہے. اور اس طرح سے ایک انسان ان فقہائے كرام کے اختلاف سے بھی نکل سکتا ہے جنہوں نے اس کی ایک حد مقرر کی ہے.
امید ہے کہ مذکورہ بیان سے جواب حاصل کر لیا جائیگا.

و اللہ سبحانہ و تعالی أعلم.
 

صفحہء اول دار الافتاء کے بارے میں استفتاء ویب سائٹ کا نقشہ آپ کی رائے اور تجویزیں ہم سے رابطہ کریں